“آپ سے کوئی لڑائی نہیں، والد کا دفاع کر رہے ہیں اور ۔۔۔” مریم نواز نے محمد زبیر کے ذریعے آرمی چیف کو کیاپیغام پہنچایا؟ معروف خاتون صحافی کا تہلکہ خیز انکشاف

اسلام آباد (ویب ڈیسک) اینکر پرسن مہر بخاری نے دعویٰ کیا ہے کہ محمد زبیر آرمی چیف سے ملاقات کرنے سے پہلے رائیونڈ میں ملاقات کرکے گئے، انہوں نے مریم کا یہ پیغام دیا کہ “آپ سے کوئی لڑائی نہیں ہے، والد صاحب کا دفاع کر رہے ہیں۔”نجی ٹی وی اے آر وائی نیوز کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے

مہر بخاری نے کہا کہ لیگی رہنما محمد زبیر نے 26 اگست کو آرمی چیف سے ملاقات کی۔ وہ کراچی سے براہ راست اسلام آباد نہیں گئے بلکہ پہلے لاہور آئے اور یہاں ملاقات کی۔ انہوں نے اپنی بات کی مزید وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ محمد زبیر نے رائیونڈ میں ایک میٹنگ کی جس کے بعد وہ راولپنڈی گئے۔مہر بخاری کے مطابق محمد زبیر کی آرمی چیف سے 3 سے 4 گھنٹے طویل ملاقات ہوئی اور انہوں نے اکٹھے ڈنر بھی کیا۔ محمد زبیر نے آرمی چیف کو مریم نواز کا پیغام پہنچایا اور کہا ” مریم کہتی ہیں کہ آپ سے کوئی لڑائی نہیں ہے، اپنے والد کا دفاع کر رہے ہیں۔” واضح رہے کہ پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے ڈائریکٹر جنرل (ڈی جی ) میجر جنرل بابر افتخار کا کہنا ہے کہ چند ہفتے قبل آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے ن لیگ کے سینئر رہنما اور سابق گورنر سندھ محمد زبیر نے ملاقاتیں کیں۔نجی ٹی وی سے بات کرتے ہوئے ترجمان پاک فوج کا کہنا تھا کہ پاکستان مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما اور سابق گورنر سندھ محمد زبیر نے آرمی چیف سے دو ملاقاتیں کیں۔ یہ ملاقاتیں ان کی درخواست پر ہوئیں۔ یہ دونوں ملاقاتیں نواز شریف اور مریم نواز سے متعلق تھیں۔ پہلی ملاقات اگست کے آخری ہفتے میں ہوئی جبکہ دوسری ملاقات 7 ستمبر کو ہوئی۔انٹرویو کے دوران میجر جنرل بابر افتخار کا کہنا تھا کہ اس ملاقاتوں کے دوران ڈائریکٹر جنرل (ڈی جی) انٹر سروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید بھی موجود تھے۔ڈی جی آئی ایس پی آر کا انٹرویو میں مزید کہنا تھا کہ اس ملاقات کے دوران پاک فوج کے سپہ سالار نے واضح انداز میں کہا کہ سیاسی مسائل پارلیمنٹ میں حل ہوں گے۔ جبکہ نواز شریف کے قانونی مسائل عدالتوں میں حل ہوں گے۔ ان معاملات سے پاک فوج کو دور رکھا جائے۔بھارت کی دھمکیوں سے متعلق ترجمان پاک فوج نے کہا کہ بھارتی صلاحیت کے مطابق ہماری تیاری ہے، جو صلاحیت ہمارے سامنے موجود ہے اسی کے مطابق ہم خود کو تیار کر رہے ہیں۔ڈی جی آئی ایس پی آر نے

کہا کہ پاکستان کی مسلح افواج محدود وسائل کے باوجود ہر طرح کے خطرات سے نمٹنے کے لیے تیار ہے اور اسی سلسلے میں نئے ٹینک شامل کرنے جارہے ہیں اور چیف آف آرمی اسٹاف نے اس کا مظاہرہ بھی دیکھ لیا۔انہوں نے کہا کہ فوج میں اس سے پہلے خالد ون بھی شامل کیا گیا جو جدید ہے اور ان ٹینکوں کو اسٹرائیک فارمیشنز میں شامل کیا جارہا ہے اور ہر طرح کے خدشات اور خطرات سے نمٹنے کے لیے تیار ہیں۔ ہمارے خطے اور اطراف میں خاص کر بھارت جس طرح کی تیاری کر رہا ہے اس کے لیے ہمیں ہر طرح سے تیار رہنا ہوگااس سے قبل مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ نواز شریف کے کسی نمائندے نے آرمی چیف قمر جاوید باجوہ سے ملاقات نہیں کی، نواز شریف کی صحت آپریشن کی متقاضی ہے، جب تک کورونا ہے نواز شریف کا آپریشن نہیں ہوسکتا۔اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کے دوران مریم نواز نے آرمی چیف سے ن لیگی نمائندے کی ملاقات کی تردید کر دی، ان کا کہنا تھا کہ ڈنر ہوا یا نہیں، اسکا کوئی علم نہیں، سیاسی معاملات سیاسی قیادت کو حل کرنے دیں، سیاسی قیادت کو بھی نہیں جانا چاہیے۔لیگی رہنما نے کہا کہ سیاسی معاملات کو پارلیمنٹ میں ہی ڈسکس کرنا چاہیے، ظلم و جبر کے ہتھکنڈے ایک حد تک چلتے ہیں۔ اے پی سی کے فیصلوں کی پاسداری کی جائے گی، اشتہاری کی درخواست پر منتخب وزیر اعظم کو نااہل کیا گیا۔دوسری جانب وزیر ریلوے شیخ رشید کا کہنا ہے کہ ن لیگی رہنماوں احسن اقبال اور خواجہ آصف کی آرمی چیف سے ون آن ون ملاقات ہوئی، سب نےاکٹھی ملاقاتیں کی اورکھل کرملاقاتیں کیں۔ کچھ دن پہلے بھی آرمی چیف سے ملاقات ہوئی تھی۔ ن لیگی رہنماوں کی عسکری قیادت سے 2 ماہ میں 2 ملاقاتیں ہوئیں، شیخ رشید کا کہنا تھا ایک ملاقات میں شہباز شریف اور میں ایک ٹیبل پر موجود تھے۔

dadaddadd

اپنا تبصرہ بھیجیں