اگر ایک ہفتے میں یہ کام نہ کیا تو آپ سے استعفیٰ لے لیا جائے گا ؟ سپریم کورٹ نے سب کو ہلا کر رکھ دینے والا حکم جاری کردیا

اسلام آباد(ویب ڈیسک)سپریم کورٹ نے تہرے موت کے کیس میں ڈی آئی جی حیدرآباد کی رپورٹ غیر تسلی بخش قراردیدی، عدالت نے پولیس کو 2 ہفتے میں دونوں مفرور ملزموں کو گرفتار کرنے کی آخری مہلت دیتے ہوئے کہاکہ ڈی آئی جی صاحب!ایک ہفتے ہے دونوں مفرور گرفتار کریں ،

دونوں مطلوب مفرور گرفتار نہ ہوئے تو آپ اس عہدے پر نہیں رہیں گے ،یہ بھی ہو سکتا ہے نوکری بھی چلی جائے۔نجی ٹی وی جی این این کے مطابق سپریم کورٹ میں تہرے موت کے کیس کی سماعت ہوئی، چیف جسٹس گلزاراحمد کی سربراہی میں بنچ نے سماعت کی ،چیف جسٹس گلزاراحمد نے کہاکہ ڈی آئی جی صاحب!ایک ہفتے ہے دونوں مفرور گرفتار کریں ، دونوں مطلوب مفرور گرفتار نہ ہوئے تو آپ اس عہدے پر نہیں رہیں گے ،یہ بھی ہو سکتا ہے نوکری بھی چلی جائے،ڈی آئی جی نے کہاکہ پوری کوشش کررہے ہیں ۔چیف جسٹس پاکستان نے کہاکہ کیاآپ زمین میں کھڈے کھود رہے ہیں؟ یہ کون سے دور کی پولیسنگ کررہے ہیں ،آپ کے بندوں کو معلوم ہے دونوں مفرور ملزم کدھر ہیں ، کاغذوں سے باہر نکل کر بھی کام کریں ، ہمیں یہ نہ بنائیں آپ کیا کررہے ہیں ، عدالتی حکم پر عملدرآمد یقینی بنائیں ،عدالت نے پولیس کو 2 ہفتے میں دونوں مفرور ملزموں کو گرفتار کرنے کی آخری مہلت دیدی۔ دونوں مطلوب مفرور گرفتار نہ ہوئے تو آپ اس عہدے پر نہیں رہیں گے ،یہ بھی ہو سکتا ہے نوکری بھی چلی جائے۔نجی ٹی وی جی این این کے مطابق سپریم کورٹ میں تہرے موت کے کیس کی سماعت ہوئی، چیف جسٹس گلزاراحمد کی سربراہی میں بنچ نے سماعت کی ،چیف جسٹس گلزاراحمد نے کہاکہ ڈی آئی جی صاحب!ایک ہفتے ہے دونوں مفرور گرفتار کریں ، دونوں مطلوب مفرور گرفتار نہ ہوئے تو آپ اس عہدے پر نہیں رہیں گے ،یہ بھی ہو سکتا ہے نوکری بھی چلی جائے،ڈی آئی جی نے کہاکہ پوری کوشش کررہے ہیں ۔چیف جسٹس پاکستان نے کہاکہ کیاآپ زمین میں کھڈے کھود رہے ہیں؟ یہ کون سے دور کی پولیسنگ کررہے ہیں ،آپ کے بندوں کو معلوم ہے دونوں مفرور ملزم کدھر ہیں ، کاغذوں سے باہر نکل کر بھی کام کریں ، ہمیں یہ نہ بنائیں آپ کیا کررہے ہیں ، عدالتی حکم پر عملدرآمد یقینی بنائیں ،عدالت نے پولیس کو 2 ہفتے میں دونوں مفرور ملزموں کو گرفتار کرنے کی آخری مہلت دیدی۔

dadaddadd

اپنا تبصرہ بھیجیں